education department corruption 481

اوکاڑہ محکمہ تعلیم کی بے ضابطگیوں کی ایک جھلک ملاحظہ کیجئے

دیپالپور،شاہداقبال نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ میں دیپالپور کے قصبہ راجووال کا رہائشی ہوں میرے والد صاحب محکمہ تعلیم میں بطور استاد ملازم تھے جو دوران سروس 25 اپریل 2017 کو وفات پاگئے گھر کے اخرجات کا واحد ذریعہ والد کی تنخواہ جو والد کے وفات پاتے ہی بند شاہد اقبال اپنے والد کی پینشن اور گریجویٹی کیلئے گزشتہ ڈیڑھ سال سے محکمہ تعلیم اوکاڑہ آفس کے دھکے کھا رہا مگر وہاں بیٹھا کرپٹ مافیا 25 ہزار روپے رشوت کھانے اور 200 چکر لگوانے کے باوجود اُس کی فائل پر اعتراضات لگا کر اپنے ٹیبل کی زینت بنائے بیٹھا ہے گھر میں فاقہ کشی فیس نہ ہونے پر کالج سے نکال دیا گیا چھوٹے پانچ بہن بھائیوں کی تعلیم بھی خطرے میں مگر محکمہ تعلیم کی بڑی بڑی توندوں والے کرپٹ اہلکاروں کو ترس نہیں کوئی خوف خدا نہیں اُنہیں کسی کی فاقہ کشی سے کیا اُنہیں رشوت چاہیئے خدا غارت کرے ایسے رشوت خوروں کو جو یتیموں کو بھی معاف نہیں کرتے ہیں۔
بشکریہ :ملک سیف اللہ نوناری

Subscribe
ہماری تمام سٹوریز اپنے میل باکس میں حاصل کرنے کیلئے سبسکرائب کیجئیے
I agree to have my personal information transfered to MailChimp ( more information )

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.