dpo okara inagurated sukh pur police choki 492

ڈی پی او اوکاڑہ حسن اسد علوی نے اسلم خان(شہید)چوکی سکھ پور کا افتتاح کردیا

اوکاڑہ (بیورورپورٹ )ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر حسن اسد علوی نے کہاہے کہ جو قومیں اپنے شہدا ء کے احسانات کو یاد رکھتی ہیں ایک دن وہ عالمی سطح پر سرفراز قرار پاتی ہیں کوئی بھی امر شہدا ء کی قربانیوں کا نعم العبدل نہیں ہوسکتا مجھے فخر ہے کہ میں آج ایک شہید کے نام پر بنائی گئی پولیس چوکی کا افتتاح کر رہا ہوں ترجمان پولیس کے مطابق ان خیالات کا اظہار انہوں نے اسلم خان (شہید ) سکھ پور چوکی کا افتتاح کرتے ہوئے کیااس موقع پر شہید اسلم خان کے دونوں بیٹے افضل خان اوراخترخان بھی موجود تھے جنہوں نے اپنے والد کے نقش قدم پر چلتے ہوئے پولیس ڈیپارٹمنٹ میں انتھک محنت کی اور جلد ہی انسپکٹرکے رینک تک رسائی حاصل کرلی ڈی پی او حسن اسد علوی نے کہاہے کہ پولیس فورس اپنی محنت ، لگن اور جذبہ کے ساتھ شہریوں کو امن فراہم کررہی ہے فرائض کی ادائیگی میں پولیس نے اپنے خون کے نذرانے دئیے ہیں ان کا خون ملک و قوم کے لئے ایک سرمایہ سے کسی طور پر کم نہیں ہے ان کی شہادتوں کی وجہ سے آج قوم میں حیات کی لہر دوڑ رہی ہے ان کا خون رائیگاں گیا اور نہ ہی رائیگا ں جائے گا بعد ازاں ڈسڑکٹ پولیس آفیسرحسن اسد علوی مظہر فرید شہید کے گھر گئے اس موقع پر تمام ایس ڈی پی او اور ایس ایچ او ہمراہ تھے انہوں نے بیوہ اور ان کے والد کی امدادکے لئے چیک دئے انہوں نے کہا کہ شہید کے خون کے احسان کو چکانا میرے لئے ہی نہیں پوری قوم کے لئے ناممکن ہے تاہم امداد کرنا اور شہید کے ورثاء کی دل جوئی کرنا ایک قومی فریضہ تو ہے ہی ایک اسلامی حکم بھی ہے جس کی تکمیل کے لئے میں اورمیری فورس کے افسران اور جوان خود حاضر ہوئے ہیں بیوہ ، والدین اور شہیدکے دیگر عزیز واقارب کا خیال رکھنا ہماری ذمہ داری ہے جب بھی کوئی مسئلہ ہو تو اپنے قریبی ترین پولیس اسیٹیشن ، ایس ڈی پی او کے آفس سے رابطہ کریں اگر کسی کی طرف سے کوئی کوتاہی کی علامت سامنے آئے تو میرے گھر اور آفس کے دروازے چوپیس گھنٹے کھلے ہیں اپنے مصروف ترین دن کے آخرمیں ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر حسن اسد علوی نے دیپالپور کے افسران اور ملازمین کے ساتھ افطارڈنر کیا جس میں ایس ایچ او نواب ڈوگر، ایس ایچ او سٹی دیپالپور ملک تصور ،ایس ایچ او حویلی لکھا مہر یوسف سمیت دیگر ایس ایچ اوز نے شرکت کی اس موقع پر ڈی پی او افسران او رملازمین میں گھل مل گئے اور ان کی خیریت دریافت کی اور ان کے محکمانہ اور ذاتی امور پر بات چیت کی ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں